بابِ ب

بینک

سوال # 1:
مورٹگیج کے بارے میں شرعی حکم کیا ہے کیونکہ مغرب میں رہنے والے حضرات مورٹگیج (پراپرٹی پر سُودی قرضہ) لیتے ہیں؟
جواب:
بامرِ مجبوری سُودی قرضہ لینا پڑ جاۓ تو اس کے جواز کا شرعی حیلہ فقہاء نے یہ تجویز کیا ہے کہ قرضہ لیتے وقت یہ ارادہ کیا جاۓ کہ جس قدر وہ قرضہ لے رہا ہے اتنا ہی اس کے ذمہ شرعا” واجب الادا ہے اور جب وہ اصل رقم ادا کر چکے تو اب وہ شرعا” فارغ الذمہ ہو جاۓ گا۔ اور جب سُود والی رقم ادا کرنا چاہے تو ارادہ یہ کرے کہ وہ اسکی رقم ہے جو وہ بنک کو ہبہ کر رہا ہے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s